زخموں کی کیا بات کرتےہو یہ تو بھر جایا کرتے ہیں

بےشک   اک   طویل مدّت تک دل کو تڑپیا کرتے ہیں

حوصلے     اور       ہمت  ک    نشانیاں      ہیں    یہ

ہزاروں     قصّے     کہانیاں     سنایا     کرتے    ہیں

 

درد،   تکلیف    اپنے اندر  سموۓ ہوۓ

جوش اور طاقت کے موتی پروئے ہوئے

بغاوتوں  ، رنجشوں  ، کانٹوں کی داستان

صبر کی برسات  سے ہمیں بھگوۓ ہوۓ

 

وہ   لڑکی   دیکھو   سہمی   سہمی سی

چیکھیں  بلند،  دعائیں دھیمی دھیمی سی

اب    اکثر   خاموش   ہی رہا کرتی ہے

اور چھپاتی ہے چوٹیں گہری گہری سی

 

وہ      لڑکا    جو      تھا   منچلا

ٹھوکر   کھا       کر     گر    پڑا

روکا اسے، زنجیروں سے باندھ دیا

پھر بھی  مشکلوں   سے وہ نہ ڈرا

 

یہ   زخم   جو   بڑے  گہرے ہیں

یہ   لوگ   دنیا  کے جو بہرے ہیں

چیکھ چیکھ کر بولتی ہیں یہ چوٹیں

پر سب ہی چپ سادھے کھڑے ہیں

 

وقت کے کیے ستم سب نے دیکھے

جزباتوں  کی گرمی سے ہاتھ سیکے

پر   ساتھ    دینے    کون    آیا یہاں

بس صبرکی تلقین کے پتھر پھینکے

 

وقت ابھی کچھ اور ہے پر رٗت نے بدلنا ہے

گرے   ہیں  تو  کیا ہوا، اک روز سنبھلنا ہے

اس   بےجان،   بےرنگ   دنیا   کو  ہم  نے

خواہشوں، کامیابیوں، خوشیوں سے بھرنا ہے

 

ہاں    بےشک   یہ  زخم   قصّے   سناتے   ہیں

کبھی  روح  جھلستی ہے، کبھی ہمیں رلاتی ہے

مگر    گرنا،    ٹوٹنا،    بکھرنا   تو    مٗقدّرہے

یہ بکھرے ٹکڑے مل کر ہمیں انسان بناتے ہیں

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *