تم اکثر یاد آتے ہو

یونہی پتجھڑ کے موسم میں

کبھی سنسان راہوں پہ

ہر اٹھتے قدم کے ساتھ

تم اکثر یاد آتے ہو

یونہی یاروں کی محفل میں

کبھی خاموش لمحوں میں

میں اچانک کھو سا جاتا ہو

کوئی جھانکے اگر تب 

دل کے اندورن گوشوں میں

تم اکثر یاد آتے ہو

میں جب ڈھلتا ہوا سورج دیکھوں

خزاں رسیدہ پتوں کو بکھرا ہوا دیکھوں

تو اس شام کا عکس آنکھوں میں اترتا ہے 

جس میں ذات میری آج تک قید بیٹھی ہے

اور دل کی ہر، دھڑکن کے ساتھتم اکثر یاد آتے ہو

کائنات ملک –

5 1 vote
Article Rating
Subscribe
Notify of
1 Comment
Oldest
Newest Most Voted
Inline Feedbacks
View all comments
UsmanGhani
19 days ago

Its amazing